اعظم سواتی پھر گرفتار، جسمانی ریمانڈ منظور

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما اور سینیٹر اعظم سواتی کو پھر گرفتار کر لیا گیا جبکہ ان کا 2 روزہ جسمانی ریمانڈ بھی منظور کر لیا گیا۔

نمائندہ ہم نیوز کے مطابق پی ٹی آئی رہنما سینیٹر اعظم سواتی کو وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے ان کے گھر سے گرفتار کر لیا۔ اعظم سواتی کو اداروں کے خلاف متنازعہ ٹوئٹس کرنے پر گرفتار کیا گیا۔

ایف آئی اے ذرائع کے مطابق اعظم سواتی کے خلاف ایف آئی اے میں ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: عمران خان کا تمام اسمبلیوں سے استعفے دینے کا فیصلہ

جوڈیشل مجسٹریٹ نے اعظم سواتی کا 2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے ایف آئی اے کے حوالے کر دیا۔

دوسری جانب سینیٹر اعظم سواتی کے خلاف کوئٹہ کے تھانہ کچلاک میں مقدمہ درج کر لیا گیا۔ شہری کی مدعیت میں مقدمہ اداروں کے خلاف تقریر کرنے پر درج کیا گیا۔ مقدمے میں پیکا ایکٹ 2016 اور تعزیرات پاکستان کی دفعات شامل ہیں۔

پی ٹی آئی رہنما اسد عمر نے کہا کہ اعظم سواتی کی گرفتاری سے ظاہر ہوتا ہے وہ اصول کے لیے لڑ رہے ہیں۔ آپ اعظم سواتی کے الفاظ کے انتخاب اور خیالات سے اختلاف کر سکتے ہیں لیکن اس سے اختلاف نہیں کرسکتے جو کچھ بھی ہوتا ہے اسے قانون کے دائرے میں رہ کر کرنا چاہیے۔

پی ٹی آئی رہنما حسان خاور نے سینیٹر اعظم سواتی کی گرفتاری کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اعظم سواتی نے ملک میں قانون کی حکمرانی کی بات کی اور قانون کی حکمرانی کے بغیر ترقی نہیں ہو سکتی۔

متعلقہ خبریں