وفاقی کابینہ میں توسیع کا فیصلہ، مشاورت شروع

اسلام آباد:  وفاقی حکومت نے کابینہ میں توسیع کا فیصلہ کر لیا ہے اور اس سلسلے میں وزیراعظم عمران خان نے اپنے رفقاء سے مشاورت کا آغاز کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق کابینہ میں توسیع کے بعد سینیٹراعظم سواتی، مراد سعید، علی امین گنڈہ پور، علی ذیدی، زرتاج گل اور سید فخرامام کو وزراء بنائے جانے کا امکان ہے۔

معاملہ سے آگاہی رکھنے والے ذرائع کا کہنا ہے کہ حیدر علی خان، عمر ایوب اور عامر ڈوگر کو  بھی کابینہ میں شامل کیے جانے کا امکان ہے جب کہ تحریک انصاف کی اتحادی بلوچستان عوامی پارٹی کو بھی ایک وزارت ملنے کا امکان ہے۔

معاملہ کے متعلق ذرائع کا کہنا ہے کہ کابینہ میں شامل کیے جانے والے اراکین کا حتمی فیصلہ وزیراعظم کریں گے۔

اس وقت وفاقی کابینہ 16 وفاقی وزراء اورایک وزیرمملکت پر مشتمل ہے کابینہ میں چارمشیر اور تین افراد وزیراعظم کے معاون خصوصی ہیں۔ وزیر اعظم کے مشیر پرائے پارلیمانی اموربابراعوان نے نیب کی جانب سے نندی پور اسکینڈل میں اپنے خلاف ریفرنس دائر ہونے کے بعد کابینہ سے استعفی دے دیا تھا۔

موجودہ کابینہ میں شاہ محمود قریشی وزیرِ خارجہ، اسد عمر وزیرخزانہ، شفقت محمود وفاقی تعلیم و قومی ورثہ جبکہ پرویز خٹک وزارتِ دفاع کے پاس دفاع کے قلمدان ہیں جبکہ وزارتِ اطلاعات فواد چوہدری اور وزارتِ قانون ایم کیوایم کے فروغ نسیم، شیریں مزاری وزیر انسانی حقوق، عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید  وزیر ریلوے، نورالحق قادری کو وزارتِ مذہبی امور،غلام سرور خان وزیر پٹرولیم، زبیدہ جلال وزیر دفاعی پیداوار، فہمید ہ مرزا وزیر برائے بین الصوبائی رابطہ، ایم کیو ایم کے خالد مقبول صدیقی وزیربرائے انفارمیشن ٹیکنالوجی، عامر کیانی وزیر نیشنل ہیلتھ سروسز اور طارق بشیر وزیر سیفران ہیں۔

امین اسلم کووزیر اعظم کے مشیر برائے ماحولیات ، معروف صنعت کار عبدالرزاق داوٴد مشیر کامرس جب کہ عشرت حسین مشیر برائے ادارتی اصلاحات مقرر کیے گئے ہیں۔ شہریار آفریدی کے پاس وزیر مملکت برائے داخلہ کا قلمدان ہے۔ 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز